ملک میں مون سون بارشوں سے 77 افراد جاں بحق ہوچکے ہیں: شیری رحمٰن

  • بدھ 06 / جولائی / 2022

وفاقی وزیر ماحولیات شیری رحمٰن نے کہا ہے 14 جون کو شروع ہونے والی مون سون بارشوں سے ملک بھر میں اب تک 77 افراد جاں بحق ہوچکے ہیں۔ 39 افراد بلوچستان میں جاں بحق ہوئے۔

اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے شیری رحمٰن نے کہا کہ اعداد و شمار میں بچے اور خواتین بھی شامل ہیں، ہم قومی اور صوبائی ڈیزاسٹر مینجمنٹ حکام کے ذریعے مقامی افراد تک پہنچنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ رواں ہفتے کے شروع سے ہی ملک کے مختلف علاقوں میں موسلادھار بارشوں کا سلسلہ جاری ہے، حکام کے مطابق ان بارشوں اور ریلوں بلوچستان میں تباہی پھیلا دی ہے جہاں مقامی انتظامیہ کسی بھی ہنگامی صورت حال سے نمٹنے کے لیے مزید اقدامات کر رہی ہے۔

شیری رحمٰن نے کہا کہ کوئٹہ، پسنی اور تربت میں سیلاب بھی آیا ہے، پانی کی سطح بلند ہے۔ اس لیے شہریوں کو احتیاط برتنے کی ضرورت ہے کیونکہ مون سون کا سلسلہ تبدیل ہو رہا ہے، اس وقت پاکستان بھر میں بارشیں اوسط سے 87 فیصد زیادہ ہیں۔ وفاقی وزیر نے توجہ دلائی کہ بلوچستان میں معمول سے 274 فیصد زیادہ بارشیں ہوئیں جبکہ سندھ میں 261 فیصد زیادہ بارش ہوئی۔

انہوں نے کہا کہ یہ آغاز ہے اور ہمیں اس کے لیے تیار رہنے کی ضرورت ہے۔ وزارت ماحولیات نے الرٹس جاری کردیا ہے اور صوبوں کو نالوں کی صفائی کی ہدایت بھی کردی ہے۔

شیری رحمٰن نے وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ مون سون سے قبل بارشیں قبل از وقت ہوئیں، اس کے لیے وزارت اور این ڈی ایم اے نے ایک ہنگامی منصوبہ تیار کرلیا تھا۔ منصوبے کا حوالہ دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ صوبوں کو ریلیف منصوبے ترتیب دینے ہوں گے اور کسی تعاون یا مدد کی ضرورت پڑے تو وفاقی حکومت سے رجوع کرلیا جائے۔

محکمہ موسمیات اور ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹیز روزانہ کی بنیاد پر ایڈوائرزی جاری کر رہے ہیں لیکن حکام کی جانب سے انہیں سنجیدہ لینے کی ضرورت ہے۔ اب بارشوں کا چھٹا دن ہے اور ہمیں فعال رہنے کی ضرورت ہے۔

loading...