پاکستان سفر کرنے پر کرنسی اور زیورات کی تفصیلات جمع کرانے کا حکم

  • جمعرات 18 / اگست / 2022

پاکستان سول ایوی ایشن اتھارٹی نے بیرونِ ملک سے پاکستان آنے اور جانے والے مسافروں کو کسٹم ڈیکلریشن فارم بھرنے کو لازمی قرار دے دیا ہے۔ مسافروں کو غیرملکی کرنسی اور زیورات کی تفصیلات بتانا ہوں گی۔

ملک کے تمام تر ہوائی اڈوں پر بیرونِ ملک جانے والے مسافروں کے لیے بورڈنگ پاس کا اجرا کسٹمز ڈیکلریشن فارم سے مشروط کردیا گیا ہے۔ پاکستان کے تمام ہوائی اڈوں پر اب بیرونِ ملک سے آنے والے مسافروں کو کسٹمز ڈیکلریشن فارم پُر کرنا ہوگا۔ فارم میں مسافروں کے پاس موجود نقد غیر ملکی کرنسی اور زیورات کی تفصیل درج کرنا ہوگی۔

ترجمان سول ایوی ایشن اتھارٹی نے ایک بیان میں کہا ہے کہ پاکستان آنے والی فلائٹس میں دورانِ پرواز فضائی میزبان مسافروں کو تاکید کریں گے کہ وہ کرنسی اور کسٹم ڈیکلریشن فارم ایئر پورٹ پر جمع کرائیں۔ تمام بین الاقوامی مسافرروں کو کسٹمز کاؤنٹر پر ڈیکلریشن کی تفصیل امیگریشن سے قبل فراہم کرنا ہوگی۔ اس مقصد کے لیے پاکستان کسٹمز کو بھی ملک کے تمام بین الاقوامی ایئرپورٹس پر خصوصی عملہ تعینات کرنے کی ہدایت کی گئی ہے۔

ترجمان سول ایوی ایشن اتھارٹی کا مزید کہنا تھا کہ کسٹم ڈیکلریشن فارم جمع کرانے سے متعلق حکم پر عمل درآمد کے لیے کسٹمز حکام کے علاوہ پاکستان میں آپریٹ کرنے والی ائیرلائنز کے اسٹیشن مینیجر زکو بھی آگاہ کردیا گیا ہے۔

ماہرین کے بقول اس عمل کا مقصد پاکستان کو منی لانڈرنگ کی روک تھام کے عالمی ادارے فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (ایف اے ٹی ایف)کی گرے لسٹ سے نکالنا ہے جس نے جون میں ہونے والے آخری اجلاس میں پاکستان کو اپنی گرے لسٹ میں برقرار رکھنے کا فیصلہ کیا تھا۔

پاکستان کو سال 2018 میں ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ کا حصہ بنایا گیا تھا اور گزشتہ چار سال سے پاکستان ناکافی اقدامات کے باعث گرے لسٹ میں برقرار تھا۔ تاہم اب ایف اے ٹی ایف کے عہدیداروں کا کہنا ہے کہ پاکستان نے ٹاسک فورس کی جانب سے دی گئی تمام تر شرائط کو پورا کرلیا ہے جس کا حتمی جائزہ اکتوبر میں لیا جائے گا جس کے بعد اسے گرے لسٹ سے نکالنے یا مزید رکھنے کا فیصلہ کیا جائےگا۔
 

loading...