ہمیں بھیک نہیں عالمی برادری سے انصاف چاہیے: وزیر خارجہ

  • جمعرات 22 / ستمبر / 2022

وزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ ہمیں بھیک نہیں عالمی برادری سے انصاف چاہیے۔ سیلاب عالمی تباہی ہے اور اس کا ادراک بھی عالمی سطح پر ہونا چاہیے۔

فرانسیسی میڈیا کو انٹرویو دیتے ہوئے انہوں نے کہا اس وقت ہم ریلیف اور ریسکیو مرحلے میں ہیں جس کے بعد تعمیر نو کے مرحلے میں داخل ہوں گے۔ پاکستان میں سیلاب سے 1500 سے زائد اموات ہوئی ہیں، سیلاب کے بعد صحت اور خوراک جیسے بحرانوں کا سامنا ہے۔ پاکستان کو اس وقت 30 ارب ڈالر امداد کی ضرورت ہے۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ بھارت کی فسطائی، اسلاموفوبیا پر مبنی پالیسی کی وجہ سے وہاں مسلمان غیر محفوظ ہیں۔ بھارت کے ساتھ اس وقت کسی قسم کے رابطے نہیں۔ بھارت نے کشمیر میں مسلم اکثریت کو اقلیت میں بدلنے کی کوشش کی، جموں و کشمیر کی جغرافیائی حدود میں تبدیلی اقوام متحدہ کے چارٹر کی خلاف ورزی ہے۔

بلاول بھٹو کا کہنا ہے کہ بھارت جموں و کشمیر میں غیر قانونی طور پر قابض ہے۔ وہاں مسلمانوں سمیت دیگر اقلیتوں پر ظلم ڈھایا جارہا ہے۔ جموں و کشمیر میں بھارت نے 5 اگست 2019ءکو یک طرفہ غیرقانونی قدم اٹھایا۔

انہوں نے کہا کہ آج کا بھارت سیکولر نہیں، جیسا کہ ان کے بانی رہنما چاہتے تھے۔ بدقسمتی سے آج کا بھارت ایک تبدیل شدہ ملک ہے۔ اس کے ساتھ تعلقات کی ہماری طویل تاریخ ہے۔ یقین ہے کہ ہم مستقبل میں نوجوان نسل کو ایک دوسرے کے ساتھ امن کے ساتھ رہتا دیکھیں گے۔ ‘‘

وزیر خارجہ نے کہا کہ طالبان نے عالمی برادری سے کیے وعدے پورے نہیں کیے۔ طالبان کی وعدہ خلافی کی وجہ سے ان کی حکومت کو تسلیم نہیں کیا گیا۔ دکھ ہوا کہ طالبان نے لڑکیوں کو سیکنڈری اسکول جانے کی اجازت نہیں دی۔

ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ پاکستان نے ایرانی وزیر خارجہ سے نوجوان لڑکی کی ہلاکت کی شفاف تحقیقات کرانے کا کہا ہے۔ ایرانی وزیر خارجہ پر اعتماد ہے کہ وہ معاملے کی شفاف انکوائری کرائیں گے۔

loading...