امر جلیل

  • سوال، جن کے جواب نہیں ملتے

    ایک اچھی فلم آپ کب تک اور کتنی مرتبہ دیکھ سکتے ہیں؟ کبھی کبھی ایسے بھی ہوتا ہے کہ فلم اچھی نہیں ہوتی، مگر کچھ دیکھنے والوں کے لئےفلاپ یعنی ناکام فلم میں بہت کچھ ہوتا ہے۔ وہ بار بار ناکام فلم دیکھتے ہیں اور ناکام فلم سے حظ اٹھاتے ہیں۔ ان دونوں صورتوں میں، کامیاب اور ناکام فلم [..]مزید پڑھیں

  • گم گشتہ شناخت

    آپ، میں، ہم سب ایک مسلسل کہانی کا حصہ ہیں۔ اس کہانی میں ہم برصغیر ، افریقہ، امریکہ، یورپ، آسٹریلیا، کینیڈا کے لوگ اپنی اپنی تہذیب، تمدن، ثقافت، زبانوں، بولیوں اور روایتوں کے ساتھ شامل ہیں۔ اس مسلسل کہانی میں ہر وہ شخص شامل ہے جس نے کرہ ارض پر قدم رکھا۔ چرند پرند، پہاڑ، ریگس [..]مزید پڑھیں

  • سانحے جو سونے نہیں دیتے

    یہ جو کہنے والے کہتے ہیں کہ سیاست پاکستانیوں کے لئےاوڑھنا بچھونا ہے، درست کہتے ہیں۔ اس بات میں رتی برا بر شک شبہ کی گنجائش نہیں ہے۔ پچھتر برس پہلے جب پاکستان دنیا کے نقشہ پر ظہور پذیر ہوا تھا، وہ دور میرےلڑکپن کا دور تھا۔ لڑکپن سے بڑھاپے کے آخری ایام تک میں نے دیکھا ہے کہ سیا [..]مزید پڑھیں

loading...
  • ہم کبھی ایسے تو نہیں تھے!

    جب تک دم میں دم ہوتا ہے، جب تک ہم زندہ ہوتے ہیں تب تک کبھی دکھ، کبھی سکھ ملتے رہتے ہیں۔ کبھی خوشی ، کبھی غم ملتے رہتے ہیں۔ کبھی ہار، کبھی جیت سے واسطہ پڑتا رہتا ہے۔ اسی کو زندگی کہتے ہیں۔ اس موضوع پر، اس نوعیت کے موضوعات پر نہ جانے کب سے لیکچرز دینے کا سلسلہ شروع کیا۔ نہ جانے کب س [..]مزید پڑھیں

  • ایک غلطی کا خمیازہ

    آپ چاہے کتنے ہی اچھے بیٹس مین کیوں نہ ہوں، آپ چاہے کتنے ہی اچھے بالر کیوں نہ ہوں، آپ چاہے کتنے ہی اچھے آل راؤنڈر کیوں نہ ہوں اور آپ کی کارکردگی کو دیکھتے ہوئے آپ کو ٹیم کا کپتان بنا دیا جائے، یقین رکھیں آپ تن تنہا کچھ نہیں کر سکتے۔ آپ تن تنہا میچ نہیں جیت سکتے۔ میچ جیتن [..]مزید پڑھیں

  • ہم سوچتے نہیں

    کئی بار فقیر نے ہاتھ جوڑ کر ادب سے گزارش کی ہے کہ آپ سوچا کریں۔ خدا کے فضل وکرم سے، ہمارے ملک میں سوچنے پر کسی قسم کی کوئی پابندی لگی ہوئی نہیں ہے۔ آپ جو چاہیں، سوچ سکتے ہیں۔ پابندی صرف سوچ پر عمل درآمد کرنے کی ہے۔ آپ اگر اپنی سوچ پر عمل درآ مد کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں تو پھر [..]مزید پڑھیں

  • پاکستان کی ممنوعہ تاریخ

    جس ملک اور معاشرے میں سوال پوچھنے پر بندش نہ ہو، سوال پوچھتے ہوئے کسی قسم کا ڈر محسوس نہ ہوتا ہو، ایسا ملک ذہین لوگوں کا ملک ہوتا ہے۔ ایسے ملک میں لوگ بہت کچھ جانتے ہیں اور بہت کچھ جاننے کے لئے ان پر کسی قسم کی بندش نہیں ہوتی۔ ایسے ملک میں رہنا، جینا اور مرنا اچھا لگتا ہے۔ کچھ پ [..]مزید پڑھیں

  • آزادیٔ اظہار کی بھول بھلیاں

    میرے وجود میں بیٹھا ہوا بچہ بضد ہے کہ میں ڈروں مت۔ جو کچھ میں سوچ رہا ہوں، لکھ ڈالوں۔ مگر یہ ہو نہیں سکتا۔ انیس سو سینتالیس سے آج تک ہر حکومت ہمیں یقین دلاتی رہی ہے کہ ملک میں اظہار کی مکمل آزادی ہے۔ آپ جو سوچتے ہیں، اُس سوچ کو آپ کاغذ پر اُتار سکتے ہیں۔ کاغذ پر اتاری ہوئی سو [..]مزید پڑھیں

  • دھول چٹانے کا فلسفہ

    میری اپنے پڑوسی سے نہیں بنتی ۔ اس صورتِ حال کو یوں بھی دیکھ سکتے ہیں کہ میرے پڑوسی کی مجھ سے نہیں بنتی۔ میرے کہنے کا مطلب ہے کہ ہم دونوں کی آپس میں نہیں بنتی ۔ میرا پڑوسی اور میں ایک دوسرے کو برداشت نہیں کرسکتے۔ ایک دوسرے کو ایک آنکھ نہیں بھاتے۔ جی چاہتا ہے ایک دوسرے کو کچا چب [..]مزید پڑھیں

  • ڈر کا گھنا درخت

    ڈر کے حوالے سے میں آج آپ کو کام کی بات بتا رہا ہوں ۔ فقیر کی بات آپ نوٹ کر لیں، لکھ کر محفوظ کر لیں، مشہور اور عام طور پر مانی جانے والی بات ہے۔  کہتے ہیں کہ ہم سب خالی ہاتھ اس دنیا میں آتے ہیں ۔ اور خالی ہاتھ اس دنیا سے چلے جاتے ہیں یعنی ہم جس نامعلوم دنیا سے اس دنیا میں آت [..]مزید پڑھیں